Urdu News

جناب سربانند سونووال نے آئی ایم یو کانووکیشن میں بحر ہند کی بلیو اکانومی کی صلاحیت کو کھولنے کے لیے متعدد اقدامات کا اعلان کیا

آیوش کے مرکزی وزیر جناب سربانند سونووال

جناب سربانند سونووال نے آئی ایم یو کانووکیشن میں بحر ہند کی بلیو اکانومی کی صلاحیت کو کھولنے کے لیے متعدد اقدامات کا اعلان کیا

بندرگاہوں، جہاز رانی اور آبی گزرگاہوں اور آیوش کے مرکزی وزیر جناب سربانند سونووال نے آج چنئی، تمل ناڈو میں انڈین میری ٹائم یونیورسٹی (آئی ایم یو) کے 7ویں کانووکیشن میں متعدد اقدامات کا اعلان کیا۔ مرکزی وزیر نے آئی ایم یو کے ایک سینٹر فار پالیسی ریسرچ ان میری ٹائم اسٹڈیز (C-PRIMeS) کا بھی افتتاح کیا۔

C-PRIMeS مرکز بحری مطالعات کا آغاز کرے گا اور سمندری معیشت کی ترقی کے لیے ایک تھنک ٹینک کے طور پر کام کرے گا۔ حکومت کے ساگرمالا پروگرام کے وژن کی تکمیل کے لیے، جناب سونووال نے آج یہاں آئی ایم یو کے کانووکیشن میں بحر ہند کی بلیو اکانومی کے وسیع امکانات کو کھولنے کے لیے متعدد اقدامات کا اعلان کیا۔

اس موقع پر بات کرتے ہوئے، جناب سونووال نے کہا، ”آج یہاں اس اہم تقریب میں شرکت کرکے مجھے بے حد خوشی ہو رہی ہے۔ جب کہ بھارت امرت کال کے ذریعے آتم نربھر بھارت بننے کے لیے کام کر رہا ہے، بھارت کی ترقی کی کہانی کو آگے بڑھانے میں بلیو اکانومی کا کردار بہت اہم ہے۔ وزیر اعظم جناب نریندر مودی جی کی دور اندیش قیادت میں، وزارت اپنے ساگر مالا پروگرام کے ذریعے ملک کی ساحلی معیشت کو مضبوط کرنے کے لیے کام کر رہی ہے۔

مرکزی وزیر نے بحری مطالعوں میں پالیسی ریسرچ سینٹر کا افتتاح کیا

سمندری شعبوں سے نئے مواقع کو شامل کرتے ہوئے، مرکزی وزیر نے کہا، ”روایتی شعبوں جیسے جہاز رانی، سمندر کے کنارے معدنیات کی تلاش، ماہی گیری، زیر سمندر کیبل اور سیاحت کے علاوہ، ہمیں اپنی معیشت کو ایکوا کلچر جیسے آنے والے شعبوں سے بہترین فائدہ اٹھانے کے لیے لیس کرنا چاہیے۔ یہ صرف جدید میرین ٹیکنالوجیز کے بارے میں بہترین ممکنہ معلومات اور تربیت کے ذریعے ہی کیا جا سکتا ہے جو کہ یہاں IMU میں ممکن بنایا جا رہا ہے۔ مجھے یقین ہے کہ ہم اپنے طلبا اور کیڈٹس کو بہترین ممکنہ تربیت کے ساتھ قابل بنانے کے لیے کام جاری رکھیں گے تاکہ سمندری معیشت کی قیادت میں ترقی کے حتمی مقصد کو ہندوستانی معیشت کی ترقی کے لیے کھولا جا سکے۔

طالب علموں کو شعبے کے بہترین ذہنوں سے روشناس کرانے کے مقصد کے ساتھ تربیتی ماڈیول کو بہتر بنانے کے لیے، طالب علموں کو گلوبل انیشیٹو آف اکیڈمک نیٹ ورکس (GIAN) اسکیم کے تحت تربیت دی جا رہی ہے۔ صنعتی تحقیق، مشاورت اور پالیسی اسٹڈیز میں IMU کی صلاحیت کو مضبوط بنانے کے لیے، IMU نے انسٹی ٹیوٹ آف میرین انجینئرز انڈیا (IME-I) کے تعاون سے ایک چیئر پوزیشن قائم کی ہے، اور کمپنی آف ماسٹر میرینرز آف انڈیا (CMMI) کے ساتھ کیڈٹس اور طلبا کے لیے پیشہ ورانہ نمائش کی جا رہی ہے۔ فیکلٹی کی تربیت کے لیے تین سال کے لیے 3 لاکھ روپے کا مجموعی پروفیشنل ڈیولپمنٹ الاؤنس (CPDA) بھی متعارف کرایا گیا ہے۔

جناب سونووال نے آئی ایم یو سے مطالبہ کیا کہ وہ طلبا کو اس قابل بنانے پر توجہ مرکوز کریں کہ وہ ایکوا کلچرسے زیادہ فائدہ اٹھائیں

سیلف پروپلشن ماڈل (SPM) پر ’انرجی ایفیشینٹ ریور سروے ڈریفٹر ڈرون (خودکار سروے کرافٹ)‘ کی ترقی کے لیے ان لینڈ واٹر ویز اتھارٹی آف انڈیا (IWAI) کی طرف سے IMU کو 21.94 لاکھ روپے کا ایک پروجیکٹ دیا گیا ہے جو حالیہ برسوں میں IMU کی مجموعی کامیابیوں میں سے ایک ہے۔

قبل ازیں IMU کانووکیشن میں، جناب سربانند سونووال نے مختلف شعبوں کے اعلیٰ طلباء کو گولڈ اور سلور میڈل سے نوازا۔

اس پروگرام میں بندرگاہوں، جہاز رانی اور آبی گزرگاہوں اور سیاحت کے مرکزی وزیر مملکت جناب پد نائک کے ساتھ بندرگاہوں، جہاز رانی اور آبی گزرگاہوں اور سیاحت کے مرکزی وزیر مملکت نے بھی شرکت کی۔ کانووکیشن کا افتتاح پہلے آئی ایم یو کے وائس چانسلر ڈاکٹر مالنی وی شنکر نے کیا۔ 401 طلبا کو ذاتی طور پر ان کی متعلقہ ڈاکٹریٹ کی ڈگریاں، پوسٹ گریجویٹ ڈگریاں اور ڈپلوما کے ساتھ ساتھ تمام اسکولوں کی انڈر گریجویٹ ڈگریاں دی گئیں۔ تقریباً 3179 طلبا نے ورچوئل طور پر ڈگریاں حاصل کیں۔

Recommended