Urdu News

مرکزی وزیر نتن گڈکری نے آئی آئی ٹی کے طلبہ پر زور دیا کہ وہ بائیو ماس سے بائیو سی این جی، بائیو ایل این جی اور گرین ہائیڈروجن کی پیداوار کے لیے بائیو ٹکنالوجی کے استعمال کی تحقیق پر توجہ مرکوز کریں

 نتن گڈکری نے مغربی بنگال میں قومی شاہراہوں کے 4پروجیکٹوں کا افتتاح کیا 

مرکزی وزیر نتن گڈکری نے آج آئی آئی ٹی کے طلبہ سے کہا کہ وہ بائیو ماس سے بائیو سی این جی، بائیو ایل این جی اور گرین ہائیڈروجن کی پیداوار کے لیے بائیو ٹکنالوجی کے استعمال پر تحقیق پر توجہ مرکوز کریں۔ انھوں نے کہا کہ ہم بڑے پیمانے پر گرین ہائیڈروجن کے استعمال کی طرف بڑھ رہے ہیں۔ مرکزی روڈ ٹرانسپورٹ اور شاہراہوں کے وزیر نے یہ بات آج آئی آئی ٹی بمبئی میں شیلیش جے مہتا اسکول آف مینجمنٹ کے زیر انعقاد منعقدہ عالمی لیڈرشپ سمٹ الانکر 2022 سے خطاب کرتے ہوئے کہی۔

https://static.pib.gov.in/WriteReadData/userfiles/image/IIT1JDOP.JPEG

انھوں نے آئی آئی ٹی بمبئی کے طلبہ سے مزید کہا کہ ہمیں ضرورت پر مبنی تحقیق کو ترجیح دینے کی ضرورت ہے۔ انھوں نے کہا کہ تحقیق میں امپورٹ متبادل، کم لاگت، آلودگی سے پاک، دیسی حل پیش کیے جانے چاہئیں۔ ہمیںملک میں درآمد کی جانے والی اجناس کی نشاندہی کرنے کی ضرورت ہے اور پھر ان کے لیے سودیشی متبادل تیار کرنے پر توجہ مرکوز کرنے کی ضرورت ہے۔ اس سے درآمدات میں کمی آئے گی، برآمدات میں اضافہ ہوگا اور ہماری معیشت مضبوط ہوگی۔ انھوں نے کہا کہ تمام تحقیقی منصوبوں کے لیے ثابت شدہ ٹیکنالوجی، معاشی استحکام، خام مال کی دستیابی اور مارکیٹنگ پر غور کیا جانا چاہیے۔

مشتمل ہیں جو سماجی، معاشی اور تعلیمی لحاظ سے

مرکزی وزیر نے یہ بھی کہا کہ ہماری 65 فیصد آبادی کا انحصار زراعت پر ہے جبکہ زرعی جی ڈی پی صرف 12 فیصد ہے۔ انھوں نے مزید کہا کہ ملک میں 124 اضلاع ہیں جو آبادی کا کافی تناسب پر مشتمل ہیں جو سماجی، معاشی اور تعلیمی لحاظ سے پسماندہ ہیں۔ انھوں نے آئی آئی ٹی کے لوگوں پر زور دیا کہ وہ جنگلات پر مبنی صنعتوں، زراعت اور دیہی ٹکنالوجی، ان اضلاع میں قبائلی شعبوں کے لیے تحقیق کو ترجیح دیں۔ ” ہمیں دیہی، زرعی خام مال کی نشاندہی کرنے کی ضرورت ہے جو انقلاب لانے کی صلاحیت رکھتے ہیں۔ اس سے بہت ترقی ہوگی اور روزگار کے مواقع پیدا ہوں گے۔

https://static.pib.gov.in/WriteReadData/userfiles/image/IIT2EQZX.JPEG

اس بات کا ذکر کرتے ہوئے کہ مستقبل میں مختلف صنعتوں جیسے کیمیکلز، کھاد، اسٹیل وغیرہ اور نقل و حمل کے شعبے میں بھی سبز ہائیڈروجن کا استعمال کیا جائے گا، وزیر موصوف نے ملک کے نوجوان، باصلاحیت انجینئرنگ مین پاور پر زور دیا کہ وہ سیوریج کے پانی کو الیکٹرولائز کرنے اور نامیاتی فضلے کے بائیو ڈائجسٹ سے سبز ہائیڈروجن تیار کرنے پر تحقیق کریں۔ انھوں نے مزید کہا کہ اس سے ملک کی میونسپلٹیوں کو سوچھ بھارت مشن کو نافذ کرنے میں بھی مدد ملے گی اور اس کے ساتھ ساتھ فضلہ سے دولت کی شکل میں ویلیو ایڈیشن بھی ہوگا۔

دنیا کی سب سے تیزی سے بڑھتی ہوئی معیشت

انھوں نے کہا کہ ہمیں مستقبل میں توانائی برآمد کرنے والا ملک بننا چاہیے۔ انھوں نے آئی آئی ٹی کے طلبہ پر زور دیا کہ وہ کوئی بڑا چیلنج لیں جو وزیر اعظم کے آتم نربھر بھارت کے خواب کو پورا کرنے کے لیے حل طلب ہے۔ توانائی کا بحران ہمارا مسئلہ ہے، وفاقی وزیر انھوں نے مزید کہا کہ اگرچہ شمسی توانائی ملک کی کل بجلی پیداوار کا 38 فیصد ہے اور اس کا حصہ بڑھایا جارہا ہے، لیکن ہم اب بھی دنیا کی سب سے تیزی سے بڑھتی ہوئی معیشت میں تھرمل پاور پر کام روک نہیں سکتے ہیں۔ انھوں نے کہا کہ آلودگی ہمارے ماحول اور ماحولیات کے لیے ایک بڑی تشویش ہے اور ہمارا ملک 16 لاکھ کروڑ روپے کے حیاتیاتی ایندھن کی درآمد کرتا تھا۔ وزیر موصوف نے کہا کہ ہمیں سبز ایندھن پر توجہ مرکوز کرنے کی ضرورت ہے۔

Recommended