منکی پوکس نے 17 ممالک میں دستک دی، مرکزی وزارت صحت نے ریاستوں کو الرٹ کیا

https://urdu.indianarrative.com/monkey-virus-903.webp

منکی پوکس نے 17 ممالک میں دستک دی، مرکزی وزارت صحت نے ریاستوں کو الرٹ کیا

کورونا کی وبا کے درمیان اب منکی پوکس نامی وائرس نے تشویش میں اضافہ کردیا ہے۔ منکی پوکس اب تک دنیا کے 17 ممالک تک پہنچ چکا ہے اور اب یہ تیزی سے پھیل رہا ہے۔ اس کے خطرے کے پیش نظر مرکزی وزارت صحت نے ریاستوں کو چوکسی بڑھانے کی ہدایات جاری کی ہیں۔ اس کے ساتھ ہی ایئرپورٹ پر نگرانی بڑھانے کو کہا گیا ہے۔ خاص طور پر متاثرہ ممالک سے آنے والے مسافروں سے تفتیش کرنے کو کہا گیا ہے۔

نیشنل انسٹی ٹیوٹ آف وائرولوجی (این آئی وی) کی سینئر سائنسدان پرگیہ یادو نے کہا کہ ملک میں منکی پاکس کا کوئی کیس سامنے نہیں آیا ہے۔ ریاستوں کو چوکس رہنے کی ہدایت دی گئی ہے، خاص طور پر ہوائی اڈے پر آنے والے مسافروں کی اسکریننگ کے لیے۔ مشتبہ مریضوں کے نمونے NYVکو بھیجنے کو کہا گیا ہے۔ انہوں نے کہا کہ ابھی تک کوئی نمونہ موصول نہیں ہوا ہے۔ اس وبائی مرض کے پھیلاؤ کو روکنے کے لیے لوگوں کو بھی احتیاط کرنی چاہیے۔

ان ممالک میں کیسز پائے گئے ہیں

منکی پوکس کے کیسز اب تک 17 ممالک میں پائے گئے ہیں۔ ان میں یورپ کا اٹلی، سویڈن، فرانس، جرمنی، پرتگال، سپین اور بیلجیم شامل ہیں۔ اس کے علاوہ برطانیہ، امریکہ، آسٹریلیا اور کینیڈا میں بھی متاثرہ کیسز رپورٹ ہوئے ہیں۔ ماہرین کے مطابق اس انفیکشن کے کیسز عام طور پر وسطی اور مغربی افریقی ممالک میں پائے جاتے ہیں جہاں بارش زیادہ ہوتی ہے۔

منکی پاکس کیا ہے؟

منکی پوکس ایک جانور سے انسانوں میں پھیلنے والا وائرس ہے جو چیچک جیسی علامات کا سبب بنتا ہے۔ تاہم، یہ علاج کے لحاظ سے کم سنگین ہے۔ منکی پوکس وائرس ایک دوہری پھنسے ہوئے ڈی این اے وائرس ہے جس کا تعلق پوکس ویریڈی خاندان کے آرتھوپوکس وائرس جینس سے ہے۔ اس بیماری سے دنیا بھر میں اموات کی شرح 2-5 فیصد ہے۔

اس کی علامات کیا ہیں؟

منکی پوکس کے مریضوں میں ابتدائی علامات فلو جیسی ہوتی ہیں۔ ان میں بخار، سر درد، پٹھوں میں درد، کمر درد، تھکاوٹ اور سوجن شامل ہیں۔ انفیکشن کے بعد چہرے پر دانے نکلنے لگتے ہیں جو جسم کے دوسرے حصوں میں بھی پھیل جاتے ہیں۔ یہ علامات انفیکشن کے 5ویں دن سے 21ویں دن تک ظاہر ہو سکتی ہیں۔

ڈرو نہیں بلکہ ہوشیار رہو

متعدی امراض کے ماہر ڈاکٹر نریندر سینی بتاتے ہیں کہ کورونا کی طرح منکی پوکس بھی ایک متعدی بیماری ہے۔ یہ تیزی سے پھیلتا ہے۔ اس لیے بیرون ملک جانے اور آنے والے افراد کو اس بیماری کی علامات سے آگاہ ہونا چاہیے۔ اگر کسی کو کوئی علامات ظاہر ہوں تو وہ فوری طور پر خود کو قرنطینہ میں رکھیں اور علاج کروائیں۔

ڈاکٹر سینی نے کہا کہ کورونا انفیکشن کی طرح اس میں بھی ہاتھ کی صفائی کا خاص خیال رکھنا چاہیے۔ لوگ اپنے ہاتھ صاف کرتے رہیں۔ صفائی کا خیال رکھا جائے۔