Urdu News

اگلے 25 سالوں میں ہندوستان سب سے بڑی اقتصادی سپر پاور بنے گا: راجناتھ

وزیر دفاع راج ناتھ سنگھ

ہندوستان اپنے طور پر پوری عالمی معیشت کو ایک نئی سمت دینے کی صلاحیت رکھتا ہے

’نیو انڈیا‘ کے خواب کو شرمندہ تعبیر کرنے کے لیے ہم کسی دوسرے ملک پر منحصر نہیں ہیں

عالمی منڈیوں میں کساد بازاری کے خدشے کے درمیان ہندوستان کی افراط زر قابو میں ہے

نئی دہلی، 16 ستمبر (انڈیا نیرٹیو)

 وزیر دفاع راج ناتھ سنگھ نے زور دے کر کہا کہ ہندوستان اگلے 25 سالوں میں دنیا کی سب سے بڑی اقتصادی سپر پاور بن جائے گا۔ حکومت ‘نیو انڈیا’ کے خواب کو پورا کرنے میں کوئی کسر نہیں چھوڑ رہی ہے، جس کے لیے ہم کسی ملک پر منحصر نہیں ہیں۔ آج ہندوستان اپنے طور پر پوری عالمی معیشت کو ایک نئی سمت دینے کی صلاحیت رکھتا ہے۔ مستقبل کے ہندوستان کی بنیاد ‘خود انحصار ہندوستان’ کی طاقت پر ٹکی ہوئی ہے۔

وزیر دفاع نے جمعہ کو نئی دہلی میں ایک پروگرام سے خطاب کیا

جی ہاں، آج پوری دنیا میں یہ بات ہو رہی ہے کہ دنیا کا ‘مینوفیکچرنگ ہب’ کسی ایک ملک میں نہیں ہونا چاہیے۔ اب تک زیادہ تر مینوفیکچرنگ چین میں ہو رہی تھی لیکن بدلے ہوئے حالات میں بڑی ملٹی نیشنل کمپنیاں اپنی مینوفیکچرنگ کے لیے نئی جگہیں ڈھونڈ رہی ہیں۔ ماضی کا تذکرہ کرتے ہوئے وزیر دفاع نے کہا کہ ایک وقت تھا جب ملک میں دفاعی برآمدات صرف 1900 کروڑ روپے تھیں، لیکن آج یہ برآمدات تیرہ ہزار کروڑ سے زیادہ ہو چکی ہے۔ اب 2024-25 تک، صرف ہندوستان کے دفاعی شعبے کا تقریباً 1.75 لاکھ کروڑ کا کاروبار ہے اور مجموعی طور پر کم از کم پانچ بلین ڈالر کی برآمدات طے کی گئی ہیں۔

ملک کے پہلے دیسی طیارہ بردار بحری جہاز آئی این ایس وکرانت کی مثال دیتے ہوئے، جسے وزیر اعظم نے 02 ستمبر کو ملک کو سونپا تھا، راجناتھ سنگھ نے کہا کہ ہندوستان ایک دیسی طیارہ بردار بحری جہاز بنا کر منتخب ممالک میں شامل ہو گیا ہے۔ اس جہاز میں 76 فیصد دیسی آلات نصب کیے گئے ہیں۔ آج ہندوستان موبائل فون بنانے میں دوسرے نمبر پر ہے۔ اب ایپل جیسی کمپنی بھی ہندوستان میں فون بنا رہی ہے۔ دو دن پہلے میں نے میڈیا میں خبریں دیکھیں کہ کچھ ‘چپ بنانے والی’ کمپنیاں ہندوستان میں چپس بنانا چاہتی ہیں۔ اب جب کہ عالمی معیشت اپنی پیداوار کو مرکزیت دینے کے لیے نئے آپشنز کی تلاش میں ہے، ہندوستان نہ صرف اس تلاش کو پورا کرتا ہے بلکہ پوری عالمی معیشت کو ایک نئی سمت دینے کی صلاحیت بھی رکھتا ہے۔

اقتصادی محاذ پر بات کرتے ہوئے وزیر دفاع نے کہا کہ یہ ہندوستان کی معیشت کو متحرک اور موثر بنانے کا نتیجہ ہے کہ آج جب دنیا کے بڑے ترقی یافتہ ممالک ریکارڈ مہنگائی کے مسئلے سے دوچار ہیں، ہندوستان کی مہنگائی کی شرحکنٹرول میں ہے۔  ہندوستان جیسے ترقی پذیر ملک میں مہنگائی پر قابو پانے اور معاشی اصلاحات کرنے کا نتیجہ ہے کہ آج بیرونی سرمایہ کار ہندوستان کی طرف بھاگ رہے ہیں۔ 2021-22 میں 83 بلین ڈالر کی غیر ملکی سرمایہ کاری آئی ہے۔ اس وقت صرف اگست کے مہینے میں 6 بلین ڈالر کی غیر ملکی سرمایہ کاری صرف ہندوستان کی اسٹاک مارکیٹوں میں آئی ہے۔

عالمی منڈیوں میں کساد بازاری کے خوف کے مسئلہ پر انہوں نے کہا کہ ہندوستان کی معیشت پوری دنیا کی امیدوں کا مرکز بنی ہوئی ہے۔ آج، برطانیہ میں افراط زر تقریباً 18 فیصد ہے۔ امریکہ میں یہ افراط زر کی شرح 9-10 فیصد ہے۔ ان ممالک کے لوگوں نے کئی دہائیوں سے مہنگائی نہیں دیکھی تھی جب کہ اگست میں ہندوستان میں مہنگائی کی شرح 7 فیصد تھی۔ پچھلے دس سالوں میں ہندوستان دنیا کی ‘ٹاپ ٹین’ معیشتوں میں واپس آیا ہے جب وہ نویں نمبر پر آگیا ہے۔ آج، 2022 میں، ہندوستان کی معیشت برطانیہ کو پیچھے چھوڑتے ہوئے، دنیا کی ‘ٹاپ فائیو’ معیشت میں پانچویں نمبر پر ہے۔

وزیر دفاع نے کہا کہ آپ کہہ سکتے ہیں کہ ہندوستان اس وقت کمزور تھا، غریب تھا، اس لیے اسے ترقی کی راہ پر گامزن ہونے میں وقت لگا۔ لیکن آپ کو یہ جان کر حیرت ہوگی کہ 1950 میں ہندوستان کی معیشت دنیا کی چھٹی بڑی معیشت تھی۔ اگر آزادی کے بعد سے اس ملک میں برسراقتدار رہنے والوں نے ‘نیشن فرسٹ’ کی پالیسی پر کام کیا ہوتا تو ہندوستان دہائیوں پہلے ایک ترقی یافتہ ملک کی قطار میں کھڑا ہوتا۔ اب اس ملک میں عالمی معیار کا انفراسٹرکچر بنانے کی سمت میں کام جاری ہے۔ آج اس قسم کا انفراسٹرکچر شاید چین کے علاوہ کہیں اور نہیں ہے، لیکن آج  وہاں بھی سلو ڈاؤن چل رہا ہے۔

Recommended