لوگوں کی توقعات پر پورا اترنے کے لیے کمیٹیوں کے نظام کو لچکدار بنانا چاہیے: لوک سبھا اسپیکر

https://urdu.indianarrative.com/Lok-Sabha-Speaker70.webp

لوگوں کی توقعات پر پورا اترنے کے لیے کمیٹیوں کے نظام کو لچکدار بنانا چاہیے: لوک سبھا اسپیکر

لوک سبھا کے اسپیکر اوم برلا نے اتوار کو پارلیمنٹ کی پبلک اکاؤنٹس کمیٹی کی صد سالہ تقریبات کے اختتامی اجلاس سے خطاب کرتے ہوئے کہا کہ وقت کے ساتھ ساتھ پبلک اکاؤنٹس کمیٹی کی مطابقت میں اضافہ ہوا ہے اور کمیٹی سے لوگوں کی توقعات اور امیدوں میں بھی اضافہ ہوا ہے۔ اس لیے پبلک اکاؤنٹس کمیٹی کی ذمہ داری ہے کہ وہ اپنے طریقہ کار کو لچکدار بنائے۔ ان کا مزید کہنا تھا کہ ملکی ترقی کے لیے کمیٹی اور ایگزیکٹو کو جوابدہ بنایا جائے اور حکومت کے کام میں شفافیت کو یقینی بنایا جائے تاکہ قطار میں کھڑے آخری فرد کے فائدے اور فلاح و بہبود کو یقینی بنایا جا سکے۔

لوک سبھا کے اسپیکر نے تجویز پیش کی کہ ہندوستان کی پارلیمنٹ اور ریاستی قانون سازوں کی پبلک اکاؤنٹس کمیٹیوں کے لیے ایک مشترکہ ڈیجیٹل پلیٹ فارم بنایا جانا چاہیے جہاں ایسی کمیٹیاں اپنے بہترین طریقوں کا اشتراک کر سکیں اور ان کی سفارشات پر کی گئی کارروائی کی نگرانی بھی کر سکیں۔ انہوں نے مزید کہا کہ پارلیمانی کمیٹیوں کو عوام سے براہ راست رابطہ کرنا چاہیے اور ان کی رائے لینا چاہیے۔ لوگوں سے جتنا زیادہ رابطہ ہوگا، کمیٹی کی سفارشات اتنی ہی زیادہ موثر اور بامعنی ہوں گی۔

پبلک اکاؤنٹس کمیٹی کو مزید مضبوط بنانے اور ہندوستان کی پارلیمنٹ کی پبلک اکاؤنٹس کمیٹیوں اور ریاستی قانون سازوں کے درمیان بہتر تال میل پر زور دیتے ہوئے، برلا نے تجویز پیش کی کہ پبلک اکاؤنٹس کمیٹیوں کے چیئرمینوں کی ایک کمیٹی ہونی چاہیے اور وہ کمیٹی کام کاج کے لیے ذمہ دار ہو گی۔ پبلک اکاؤنٹس کمیٹیوں کے بارے میں بڑے پیمانے پر بحث کی جائے اور ان کے کام کو مزید موثر بنانے کے لیے ذہن سازی کی جائے۔ اس کمیٹی کی طرف سے دی گئی رپورٹس یا تجاویز پر پریزائیڈنگ آفیسر زیر بحث لا سکتا ہے تاکہ پبلک اکاؤنٹس کمیٹیوں کو مزید جوابدہ، شفاف اور عوام کے لیے فائدہ مند بنایا جا سکے۔ اس وقت پبلک اکاؤنٹس کمیٹیوں کے کام کے وسیع دائرہ کار کے بارے میں بات کرتے ہوئے انہوں نے مزید کہا کہ گورننس میں شفافیت کو یقینی بنانے کے لیے انفارمیشن ٹیکنالوجی کے ٹولز کو وسیع پیمانے پر استعمال کیا جانا چاہیے۔

   پبلک اکاؤنٹس کمیٹی کے چیئرمین ادھیر رنجن چودھری نے کہا کہعاملہ کا مقننہ کو جوابدہ ہونا پارلیمانی جمہوریت کی بنیاد ہے۔ اس لیے پارلیمنٹ کا عوامی اخراجات پر کنٹرول صرف ووٹنگ تک ہی محدود نہیں ہے کہ ملک کی حکمرانی کو چلانے کے لیے درکار رقم کی ضرورت ہو بلکہ پارلیمنٹ اس بات کو بھی یقینی بناتی ہے کہ اخراجات کو منصفانہ طریقے صرف   کیا جائے اور اس کے ذریعے منظور شدہ پالیسیوں کے بنیادی مقصد کو حاصل کیا جائے۔ چودھری نے کمیٹی کے غور و خوض پر اطمینان کا اظہار کرتے ہوئے امید ظاہر کی کہ پبلک اکاؤنٹس کمیٹی آنے والے سالوں میں جمہوریت کو کامیاب بنانے اور جمہوری قانون ساز اداروں کے لیے اعلیٰ معیار قائم کرنے کے لیے مزید دیانتداری اور ایمانداری کے ساتھ کام کرے گی۔