پاکستان: ہزاروں نابالغ ہندو،عیسائی لڑکیوں نے اسلام قبول کر لیا: رپورٹ

https://urdu.indianarrative.com/GIRLS-CONVERTED-TO-ISLAM.webp

پاکستان: ہزاروں نابالغ ہندو،عیسائی لڑکیوں نے اسلام قبول کر لیا: رپورٹ

اسلام آباد ،9 دسمبر

انکوائری رپورٹ کے مطابق ہر سال، پاکستان کی مذہبی اقلیتی برادریوں سے تعلق رکھنے والی ایک ہزار سے زائد نابالغ لڑکیوں اور خواتین کو اغوا کیا جاتا ہے، زبردستی اسلام قبول کیا جاتا ہے اور ہر سال ان کی شادیاں کر دی جاتی ہیں، یہ بات برطانوی زیر قیادت آل پارٹی پارلیمانی گروپ (اے پی پی جی)  کی تحقیقات میں سامنے آئی ہے۔ یہ اعداد و شمار وسیع تحقیقات پر مبنی ایک تخمینہ ہے، لیکن درست نہیں ہے کیونکہ "حقیقی تعداد کا کبھی پتہ نہیں چل سکتا"، پاکستانی اقلیتوں سے متعلق اے پی پی جی کا کہنا ہے کہ اپنی انکوائری رپورٹ میں جگہوں پر شامل کیا گیا ہے کہ اس نے جو کچھ پایا ہے وہ  بہت معمولی  ہے۔

یہ 1947 میں پاکستان کی پیدائش کے بعد سے وفاقی اور صوبائی سطح پر قوانین کی عدم موجودگی میں جاری ہے۔ وہ چند جو نافذ ہیں یا تو نظر انداز کر دیے جاتے ہیں یا پولیس اور عدالتوں کو معلوم نہیں۔ عام قانون (جنوبی ایشیا میں مروجہ اینگلو سیکسن قانون) اور اسلامی شریعت کو مجرموں کی حمایت کے لیے استعمال کیا جاتا ہے۔ کچھ مدد برطانوی دور کے پاکستان پینل کوڈ کی دفعات ہیں، جو 1860 میں نافذ کیا گیا تھا۔رپورٹ، ستمبر 2021 میں شائع ہوئی۔ پاکستانی اقلیتوں کے لیے اے پی پی جی کے چیئر، جم شینن ایم پی اور چیئر، اے پی پی جی فار انٹرنیشنل فریڈم آف ریلیجن یا بیلیف کی سربراہی میں، کونسلر مورس جانز، ڈاکٹر ایویلینا اوچاب، پروفیسر جاوید رحمان اور نکولس نے تصنیف اور ترمیم کی ہے۔

رپورٹ کے ذریعے چلنے والی ایک سطر پاکستانی سیاست کے تمام طبقوں کی طرف سے ’مصافیت‘ کی بات کرتی ہے۔ اس میں وفاقی اور صوبائی سطحوں پر اس وقت کی حکومت، قانون ساز، سیاسی جماعتیں، بیوروکریسی، عدلیہ، خاص طور پر نچلی سطح پر، پولیس اور سب سے نمایاں طور پر مسلم اکثریتی ملک میں علماء اور معاشرے کے رہنما شامل ہیں۔ ہر سطح پر ایک مضبوط تاثر ہے کہ وہ اپنے مذہب کی خدمت کر رہے ہیں، یعنی۔ اسلام، اور یہ کہ وہ جو کچھ بھی کریں گے اسے تحفظ ملے گا۔ رپورٹ میں 12 سے 25 سال کی عمر کے درمیان عیسائی اور ہندو لڑکیوں کے کیسز پر توجہ مرکوز کی گئی ہے، جن میں مذہبی اقلیتوں بشمول ہندو (1.59% )اور عیسائی (1.60%  ) پاکستان کی 220 ملین آبادی میں شامل ہیں۔ بدھ مت کے پیروکاروں، سکھوں اور کالاشوں کا بھی ان کے نمائندہ اداروں، فیلڈ سروے اور تحقیقاتی ادارے کے سامنے پیش ہونے والے افراد کی مدد سے سروے کیا جاتا ہے۔نمایاں سفارشات میں قومی اقلیتی کمیشن کی تقرری اور صوبائی سطح پر اسی طرح کی باڈیز، خاص طور پر سندھ اور پنجاب میں جہاں خواتین کا استحصال خاصا شدید ہے۔